مارکسی فکر ئٹی خُلّوکا بی ایس او

Click to read the article in English/Urdu

براہوئی ٹی بدل: وہید انجمؔ

سیاسی وڑئٹ نزوری نا پاسو آ ہِنوکا سماج ہراڑے کہ رجعت پسند طاقتاک ترقی پسند طاقتاتان زور ءُ طلبہ سیاست ہمو رہینگوکا پِڑ تان اسٹ ائے کہ اوڑے ترقی پسند خیالاتِہ تالان کنّنگ ، اوفتِہ مُون آ ہتنگ کِن دائسکان ہم پین گنجائش ارے ۔

بلوچ سماج ئٹی بھلّا رجعت پسند طاقتاک بورژوا قوم پرستاتا اسہ ٹولی سینا دروشم ئٹ ساڑی ءُ ہرافتا بھلّائی طاقتور قبائلی تا ایلو یامیکو طبقہ نا دُوٹی ائے ہرا بھلّو کاروباری مفاد تخسّہ اوفتا بچّفنگ کِن ایوان نا بشخ مریرہ ۔ بورژوا یا مڈل کلاس بلوچ قوم پرست رہنماتا ایہن تو مشترکئو مفاد ءُ ولے تاریخی حوالہ ئٹ او قوم پرست سیاست ئے سوگو کننگ نا جہا تقسیم ہی تقسیم نا وسپہ ئٹ کمزور کرینُہ ۔ قوم پرست سیاست ئٹی دا تقسیم نظریہ غاتا یا سیاسی وڑوڈول نا اختلاف آ افّک ہیت دادے کہ دا تقسیم بالادستی کِن گڑاس رہنما تا دا مون ہیمون مُچ مروکا قبائلی ایلیٹ و مڈل کلاس نا کیئی لشکرتا تین پہ تین نا یام ئٹی جھیڑہ نا سوَب آن مس ۔ مینگل ، بزنجو ، زہری ہندن مکران نا نام نہاد مڈل کلاس رہنماتا نْیام ئٹی اختلاف ہندا ہی ندارہ ئے پھاش کیک ہرانا بنیاد بلوچستان نا مراعات یافتہ قوم پرست قیادت ہرادے نن بلوچ سماج نا غیر صنعتی بورژوازی پاننگ کینہ ، او تقسیم نا گْواچھی ائے ۔

بلوچ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن (بی ایس او) نا تاریخ بلوچ سماج ئٹی ترقی پسند طلبہ سیاست نا تاریخ ائے ہرا 1950ء نا دہائی ٹی مونا بس ، 1970ء نا دہائی ٹی تینا کمال آ سر مننگ آن پد زوال نا کُنڈا ہنا ۔ ہمو وخت آن بی ایس او ترقی پسند طاقتاتا ایلو قوم پرست سیاست آ بالادستی کروکا رجعت پسند طاقتاتا یام ئٹی ہَڷ ئہ چھک ئنا مرکز ئسے ۔ دا جنگ ئٹی بی ایس او آ رجعت پسند قوم پرستی نا بجائے ترقی پسند خیال کبین خننگانے اونا وجہ غان بلوچ طلبہ سیاست نا تب قومی و بین الاقوامی حساب آ جمن ترقی پسند طاقتاتا نیمغا مسّنے ۔

1990ء نا دہائی ٹی رجعت پرست نسلی قوم پرستی موقع پرست پارلیمانی سیاست نا اڈّ ئٹی ترقی پسند قوم پرستی آ زور تمّا ہراڑان بورژوا قوم پرست قیادت ، ہرانا بھازی وختس تینٹ طلبہ سیاست نا بشخ رہینگاسس اودے تعلیمی ادارہ غاتیٹی تینا بالادستی کِن وخت رسینگا ۔ دا قوم پرست قیادت ئے طلبہ سیاست نا تجربہ اس او دا ہیت آن واقف اس کہ تبدیلی نا استار ارانگ آن خننگک ۔ پارلیمانی قوم پرست قیادت نا بی ایس او ٹی مداخلت نا گڑاس مقصداتان اسہ مقصد ئس طلبہ سیاست ٹی ساڑی ترقی پسند طاقتاتِہ کمزور کنّنگ اس ہمر کہ قوم پرستی نا پِن آ عوامی سیاست آ بورژوازی تینا بھلّائی ئے کرے تو ہندن طلبہ سیاست ٹی ہم بورژوا ڈول ئنا گروہ جوڑ کرسّا طالباتا نِجّا ترقی پسند ، جمہوری و بالادستی نا خلاف تنظیمی ساخت ئے رجعت پسند تنظیماتیٹی بدل کننگ اس ، ہرا اینو ننے بی ایس او نا پِن آ بورژوا قوم پرست پارٹی تا طلبہ وِنگزاتا صورت ئٹ نظر بریرہ ۔ او بے مقصد گروہ بندی ، تقسیم ہی تقسیم و نظریہ غاتان چٹ وے سرپندی نا نشانی مسّنُہ ۔

بلوچ اسٹوڈنٹاتا تاریخی ذمہ داری ائے کہ او حقیقی وڑئٹ اسٹ مریر چائِہ او نیشنلزم نا بیرک ئے بڑزا کیر یا سوشلزم نا ، یا تومکاتا اشتراک آ بریر ہرا کہ بی ایس او نا خاص فکری ٹیوار مسّنے ۔ نیشنلزم و سوشلزم نا فلسفہ غا دھڑنگوکا بی ایس او ہی سماج ئٹ بورژوا قوم پرستی نا شکل ئٹ مراعات یافتہ طبقہ نا بالادستی نا جہا مظلوم و محکوم نا توار مننگ کیک ۔

طالباتِہ اسہ آزاد و بااختیار تنظیم ئسے زندہ تخنگ کِن سخت جہد کروئی تمّو ، اسہ ہندنو بی ایس او سے کِن بش مروئی تمّو ہرا قومی بنیاد آ ہچّو بالادست نظام ئسے نا شیفا مف او تینا فیصلہ سازی آ بااختیار مرے ، آزادی ئٹ ایلو تنظیماتون اتحاد کے ، وخت ئنا حالت نا مطابق مناسبو حکمت عملی مونا ہتِے پدا اوفتِہ سیاسی پِڑ آ عملی وڑئٹ نشان تے ۔ اسہ ہندنو بی ایس اوس ہرا تینا وجود ئٹی تو مقامی مرے ولے تینا نظریہ غاتیٹی عالمی بنیاد آ کڑمبی ودی کے موقع پرستی نا گْوازی تان پیش تمّہ ، سفا غان سفا تینا نظریہ و سیاسی مقصداتا درشانی ئے کرسّہ ایلو ترقی پسند طاقتاتون اوار مرے ، استحصال آن پاکو سماج ئسے نا پوسکنا سہب ئکن جہد کے ۔

دا تاریخی آ کاریم کِن اسٹوڈنٹا تیکن ضروری ائے کہ بی ایس او مارکسی نظریہ غاتا سلوک مرے ہرافتا بنیاد آ سماج ، تاریخ و جبر نا بھازا زیلاتا تاریخی و جدلیاتی مادیت نا سائنسی اصولاتا حساب آ تشریح کرسہ جدوجہد نا کیئی طریقہ کار دُو برے ۔ ہندا بنیاداتا پابندی آن بی ایس او نہ بیرہ اسٹوڈنٹاتِہ اسہ انقلابیئو کسر ئسے آ شاغک بلکہ طالباتا و ایلو ترقی پسند تحریکاتا یام ئٹی بروکا دیوالاتِہ ہم بٹک ۔

نظریاتی حوالہ ئٹ سفا ، تنظیمی ساخت ئٹی آزاد بی ایس او نا جہد ئٹی طالباتِہ رجعتی قوم پرستی تون اوار اوار سیاسی عمل آن بیزاری نا تب ئے رواج چوکا گروہ تا بِہ مقابلہ ئے کروئی تمّو ہرا روایتی انداز ئٹ اسٹوڈنٹاتا سیاسی توانائی ئے ایسر کننگ و اوفتِہ ، عوام ئے تین پہ تینے آن مُر شاغنگ کِن تیار ءُ ۔

بلوچ سماج ئٹی غیر سیاسی یا سیاست آن بیزاری نا وجہ ہنوکا دہائی ٹی سیاسی سوچ ئنا خلاف ظلم و زوراکی ئٹ کاروائی کننگ نا نتیجہ ائے ۔ ہراڑے قوم پرستاک عوامی سیاست تون اوار طالباتا ہم سیاسی پلیٹ فارماتِہ خاص کر بی ایس او ئے نشانہ کرسا غیر سیاسی بنیاداتا تنظیم کاری نا ماحول ودی کریر ہرافتِہ نن مختلف طلبہ کمیٹی و کونسلاتا شکل ئٹی خننگ ئٹی اُن ۔ طلبہ کمیٹی و کونسلاک بنیادی وڑئٹ غیر سیاسی حساب آ ہتنگار ولے او تعلیمی ادارہ غاتا سیاسی ماحول آن تینے یکّہ کننگ کتّوس ہراڑان طلبہ سیاست تون وابستگی تیبہ ایسر متو نتیجہ دہن مِلّا کہ سیاسی مزاج تخوکا و سیاست آن مُر مروکا طالباتا نْیام ئٹی کشیدگی نا داستان ئس ودی مس ہرا تعلیمی ادارہ غاتیٹی کُل اسٹوڈنٹس کمیٹی و کونسلاتان خننگک ۔

ترقی پسند بی ایس او ئے طلبہ کمیٹی و کونسلاتیٹی ساڑی سیاسی طالباتتون اوار جہد کروئی ائے دا خاطر آن کہ تعلیمی ادارہ غاتِہ غیر سیاسی کننگ نا کوشش بے سوب مرے ہرانا مقصد طالباتا و عوام نا سیاسی طاقت ئٹی نزوری ہتنگ ائے ۔

سماج نا تہہ ٹی موجود جبر ئنا مختلف زیلاتا خلاف جہد ئٹی بی ایس او آ دا ہم تاریخی ذمہ داری تمّک کہ او صنف ، نسل ، زبان و مذہب نا بنیاد آ تقسیم و سیاسی حوالہ ئٹ کمزور کروکا تعصباتا مذمت ئے کے تو ایلو پارہ غا عوام و طالباتِہ تقسیم و سیاسی حوالہ ئٹ کمزور کروکا سوچاتا خلاف خْوندیئو گھام ہفّہ ۔

سیاسی عمل آن نیاڑی تِہ مُر کننگ یاکہ طلبہ سیاست نا وڑئٹ اوفتا مشروط شرکت ، ہراڑے کہ سرگرم طالباتا لڑ ئٹی نیاڑیک ہم تینا مقام ئس تخرہ ۔ سیاست ئٹی نیاڑی تا خلاف خیالاک ننا سماجی و سیاسی ادارہ غاتا بُن ماس ءُ ہرافتِہ روایتی قوم پرست پارٹی تا خْواجغاک استعمال کرسّا اوفتا بارت ئٹ غُلامی والا سوچ ئے برجا تخانُہ ۔

ترقی پسند طالباتِہ نہ بیرہ نیاڑی تا خلاف روایتی خیالاتا ردی ئے پھاش کروئی ائے بلکہ بی ایس او ئے تینا تنظیمی ادارہ غاتا وسپہ ئٹ متبادل سیاسی ماحول ہتوئی تمّو ہراڑے نرینہ ، نیاڑی طالباتِہ برابری نا بنیاد آ تینا تاریخی کردار ئے ادا کننگ نا وار رسینگہ ۔

راجی پجّار ، طبقاتی وابستگی ، صنف ہندن مذہبی عقیدغاتا بنیاد آ مروکا استحصال نا خلاف مشترکہ جہد مظلوم و محکوم عوام تون ہم گام مننگ تون اوار ، اونا تینا سیاسی ماحول ئٹی مشترکہ بنیاد آ کروئی تمّو ۔

عوام نا آسراتی کِن جہد ئٹی اوار تمّوکا طالباک ہراکِہ سماج ئٹی اسہ خْوندیئو سیاسی قوّت ئسے نا رتبہ ئس تخرہ اوفتِہ تینا تعلیمی ماحول ئٹی منظم مروئی تمّو ۔

بی ایس او بلوچ اسٹوڈنٹاتا مشترکہ سیاسی پِڑ ائے بھلے ہی کیئی گروہ تا دروشم ئٹ وجود تخک ہراٹی رجعتی قوم پرست پارٹی تا مداخلت نا وجہ غان مختلف پِن تا موجودگی ٹی ہم نئے طلبہ سیاست نا ترقی پسند خیالاک ختم مسّر نئے کہ طالباتِہ غیر سیاسی جوڑ کننگ نا کوششاک ترقی پسند بی ایس او نا کسر ئے بند کرینُہ ۔ طلبہ سیاست ٹی ترقی پسند خیالاتا تالانی و بی ایس او نا مارکسی نظریہ غاتون وابستگی طلبہ سیاست ٹی ساڑی ترقی پسند و رجعت سوچاتا یام ئٹی تضاداتا ٹکّر نا نتیجہ ائے ۔

دا حالتاتیٹی طالباتا تاریخی ذمہ داری جوڑ مریک کہ او دا تضاداتِہ اسہ انقلابیئو سیاسی عمل ئسیٹ حل کرسّا ترقی پسند سیاست ئے سوگو کیر ہندن بی ایس او ئے تینا پاکنگا گتّ ئٹی آزاد و ترقی پسند سیاسی تربیت گاہ سے نا تب ئٹ بحال کیر ۔

1 thought on “مارکسی فکر ئٹی خُلّوکا بی ایس او

  1. Pingback: مارکسی نظریات پر گامزن بی ایس او – Balochistan Marxist Review

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s